الیکٹرانک ووٹنگ کی تجویز مسترد ، شہباز شریف کا وزیر اعظم کے لیے اہم مشورہ

الیکٹرانک ووٹنگ کی تجویز مسترد ،  شہباز شریف کا وزیر اعظم کے لیے اہم ..

الیکٹرانک ووٹنگ کا نظام تمام دنیا نے بھی مسترد کیا ، تباہ معیشت ، منہگائی اور بے روزگاری سے مرتی عوام کی فکر کریں ، انتخابی اصلاحات فریقین کی مشاورت اور عوامی رائے سے ممکن ہوتی ہیں ، ایک فرد کی خواہش یا حکم پر ایسے اہم قومی کام انجام نہیں پاتے ، صدر ن لیگ کا وزیر اعطم عمران خان کی انتخابی اصلاحات کی دعوت پر ردعمل

پاکستان مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف نے الیکڑانک ووٹنگ مشین کے استعمال کی تجویز مسترد کر دی ، قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر کہتے ہیں کہ الیکٹرانک ووٹنگ کے بجائے تباہ معیشت، منہگائی اور بے روزگاری سے مرتی عوام کی فکر کریں۔ تفصیلات کے مطابق اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ پاکستانی الیکشن کمیشن اسے ناقابل عمل قرار دے چکا ہے ، الیکٹرانک ووٹنگ کا نظام تمام دنیا نے بھی مسترد کیا ہے ، انتخابی اصلاحات فریقین کی مشاورت اور عوامی رائے سے ممکن ہوتی ہیں ، ایک فرد کی خواہش یا حکم پر ایسے اہم قومی کام انجام نہیں پاتے بلکہ انتخابی اصلاحات کا حساس کام پوری قوم کی منشا اور اعتماد سے ہوتا ہے اور عوام کی امنگوں کا محور پارلیمان ہے جسے 3 سال سے تالا لگایا ہوا ہے۔

مسلم لیگ ن کے صدر نے کہا کہ ملک کی ساکھ انصاف، شفافیت اور قانون کی حکمرانی سے بہتر ہوتی ہے الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں سے نہیں ، انتخابی اصلاحات ہم کر سکتے ہیں اور سیاسی مخالفین کو ساتھ لے کر چلنے، ان کی تجاویز کو اپنانے کا حوصلہ ہے ، اسی بناء پر ن لیگ نے 2018 میں پی ٹی آئی سمیت تمام سیاسی جماعتوں کی مشاورت سے انتخابی اصلاحات کی تھیں اور انتخابی اصلاحات تمام فریقین کی مشاورت ، عوام کی رائے کی روشنی اور اتفاق رائے سے ممکن ہوتی ہیں۔

سابق وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے کہا کہ ہمارے دور میں ہونے والی انتخابی اصلاحات پر کسی کو اعتراض نہیں تھا جب کہ سب کے اتفاق رائے کا مظہر اور دستخط شدہ انتخابی اصلاحات کی وہ تاریخی دستاویز آج بھی موجود ہیں ، جس وقت حزب اختلاف مثبت تجاویز، میثاق معیشت کی بات کر رہی تھی تو این آر او کا شور کر کے ان کی توہین کی گئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں