حکومت کا صرف اختیاری مضامین کے امتحانات لینے کا فیصلہ

حکومت نے 10 ویں اور بارہویں جماعت کے امتحانات 10 جولائی کے بعد لینے کا فیصلہ کر لیا۔ وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود کی زیر صدارت اجلاس ہوا جس میں فیصلہ کیا گیا کہ اسکول بند ہونے کے باعث یکسوئی سے پڑھائی نہیں ہو سکی، صرف لازمی امتحانات ہی لیے جائیں، پریکٹیکل امتحانات نہیں لیے جائیں گے، بچوں کو تیاری کا موقع ملنا چاہیے۔

نجی ٹی وی ہم کے مطابق وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے اجلاس میں ہونے والے فیصلے سے متعلق بتایا کہ 9 ویں 10 دسویں کے امتحانات صرف اختیاری مضامین اور ریاضی کا ہو گا۔انہوں نے بتایا کہ انٹرمیڈیٹ کے بھی صرف اختیاری مضامین کے امتحانات ہوں گے۔وزیر تعلیم شفقت محمود نے کہا کہ تعلیمی اداروں کے لیے مشکل فیصلے کرنے پڑے، کورونا وبا کے باعث تعلیمی اداروں کو بند کرنا آسان فیصلہ نہیں تھا۔ان کا کہنا تھا کہ رواں سال ہم نے فیصلہ کیا تھا کہ امتحانات کے بغیر کوئی گریڈ نہیں ملے گا، امتحانات ہر صورت ہوں گے۔وزیر تعلیم نے کہا کہ او لیول کے بچوں کے امتحانات جولائی میں ہوں گے، کوئی بھی استاد کورونا ویکسی نیشن کے بغیر امتحان نہیں لے گا۔انہوں نے واضح کیا کہ تمام فیصلوں میں کوئی تبدیلی نہیں ہوگی اور نہ کوئی دباوَ برداشت کریں گے۔خیال رہے کہ حکومت نے رواں سال کسی بھی طالب علم کو بغیر امتحانات کے اگلی کلاس میں پروموٹ نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔اس سے قبل بین الصوبائی وزرائے تعلیم کا اجلاس میں فیصلہ کیا گیا تھا کہ تمام کلاسزکےامتحانات ہرصورت ہوں گے۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ پہلے دسویں اور بارہویں جماعت کے امتحانات جون کے تیسرے ہفتے میں لیےجائیں گے۔نتیجہ تاخیر سے ہونے کی صورت میں جامعات پروویژنل سرٹیفکیٹ کی بنیاد پر داخلے دیں گی جب کہ موسم گرما کی تعطیلات کم ہوں گی جس سے متعلق فیصلےصوبے کریں گے۔واضح رہے کہ این سی او سی نے کورونا کے 5 فیصد سے کم والے علاقوں میں تعلیمی ادارے کھولنے کی اجازت دی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں