معدے کی بیماری سے پریشان لوگ۔

کیا آپ کو پیٹ میں اکثر بہت زیادہ گیس کا مسئلہ درپیش ہوتا ہے؟ اگر ہاں تو یہ جسم کی جانب سے مخصوص غذاﺅں پر ردعمل، کسی غذا کے اجزا برداشت نہ کرپانا یا نظام ہاضمہ کے مسائل کی علامت ہوسکتا ہے۔عام طور پر لوگ دن بھر میں 5 سے 15 بار گیس خارج کرتے ہیں مگر کئی بار یہ مقدار زیادہ بھی ہوسکتی

ہیں۔ غذائی تبدیلیاں اکثر افراد کو پیٹ میں زیادہ گیس کا مسئلہ اس وقت ہوتا ہے جب وہ اپنی غذا میں تبدیلیاں کرتے ہیں، جیسے گوشت چھوڑ کر صرف سبزیوں تک محدود ہوجانا، مختلف غذائی گروپس سے دوری اختیار کرلینا یا نئی غذاﺅں کو آزمانا۔

اس طرح کے کیسز میں چند دیگر علامات جیسے دل متلانا، بدہضمی، قبض یا ہیضے کا بھی سامنا ہوسکتا ہے جس کے دوران جسم نئی غذا کے لیے خود کو ڈھال لیتا ہے۔ کچھ غذائیں زیادہ گیس بننے کا باعث بنتی ہیں، جیسے زیادہ فائبر والی غذائیں، کیونکہ فائبر ایسا جز ہے جس کے ٹکڑے کرنا جسم کے لیے مشکل ہوتا ہے.

اور یہ چھوٹی آنت سے کلون میں بغیر ہضم ہوئے پہنچ جاتی ہیں، جہاں وہ اسے گیس کی شکل دے دیتا ہے۔ زیادہ فائبر والی غذائیں جیسے بیج، دالیں، سبزیاں اور اجناس وغیرہ معدے کے لیے فائدہ مند ہوتی ہیں مگر ان کا بہت زیادہ استعمال بدہضمی کا خطرہ بڑھاتا ہے۔ اسی طرح نشاستہ دار غذائیں جیسے گندم، مکئی، آلو وغیرہ کا استعمال بھی جسم میں گیس کی مقدار بڑھاتا ہے، جبکہ زیادہ سلفر والی غذائیں جیسے پیاز، لہسن اور گوبھی کی نسل کی سبزیوں سے بھی ایسا ہوتا ہے۔

کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں