میا خلیفہ اور جی جی حدید سمیت متعدد شوبزشخصیات بھی فلسطینیوں کے حق میں بول پڑیں

شوبزسے وابستہ شخصیات کی جانب سے مسجد الاقصیٰ اور غزہ پر حملے کی بھر پور مذمت کی گئی ہے۔ فوٹوفائل

رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں اسرائیلی فوج کی جانب سے غزہ پر فضائی حملوں اور فلسطینی باشندوں پر تشدد پر دنیا کی خاموشی نے پاکستانی فنکاروں کے ساتھ بین الاقوامی مشہور شخصیات کو بھی برہم کردیا ہےاور شوبزسے وابستہ شخصیات کی جانب سے مسجد الاقصیٰ اور غزہ پر حملے کی بھر پور مذمت کی گئی ہے۔

سابق بین الاقوامی اداکارہ میا خلیفہ نے ٹوئٹر پر اسرائیلی فوج کی جانب سے فلسطینیوں پر کیے جانے والے مظالم کی تصاویر شیئر کراتے ہوئے لکھا میں انسانیت کے خلاف ہونے والے جرائم دیکھ رہی ہوں جن کی امریکا سالانہ 3.8 بلین ڈالرزکے ساتھ مالی اعانت کررہاہے۔ اس ٹوئٹ میں میاخلیفہ نے ’’فری فلسطین‘‘ یعنی فلسطین کی آزادی کا ہیش ٹیگ بھی استعمال کیا۔

صرف میا خلیفہ ہی نہیں بلکہ امریکا کی معروف سپر ماڈل جی جی حدید نے بھی فلسطینیوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا ہے۔ انہوں نے مسجد الاقصیٰ پر اسرائیلی فوجیوں کے حملے کے بعد اسٹوری شیئر کی جس میں لکھا تھا ’’تم فلسطین کو مٹا نہیں سکوگے۔‘‘

اس کے علاوہ انہوں نے ایک اور اسٹوری میں لکھا ’’ہم ان ماؤں کی عزت کرتے ہیں جنہوں نے پولیس کے تشدد اور ڈرون حملوں میں اپنے بچوں کو کھودیا اور ان فلسطینی ماؤں کی جو اپنے بچوں سمیت اسرائیلی جیل میں ہیں۔‘‘

اداکارہ ماہرہ خان نے بھی فلسطینیوں کے حق میں آواز اٹھائی ہے انہوں نے ٹوئٹر پر اسرائیلی پولیس کی جانب سے مسجد الاقصیٰ پر حملے کی ایک ویڈیو شیئر کی اور لکھا دل دہلانے والا منظر، وحشیانہ حملہ۔ ماہرہ نے ’’فلسطین لائیوز میٹرز‘‘کا ہیش ٹیگ بھی استعمال کیا۔

اداکار فیروز خان نے مسجد الاقصی پر حملے سے متعلق سوشل میڈیا پر چلنے والے ہیش ٹیگ کے ساتھ ٹوئٹ کرتےہوئے اسرائیلی حملوں کی بھرپور مزمت کی۔

صباقمر نے فلسطینیوں پر ہونے والے مظالم پر غصہ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا فلسطین میں یہ دہشتگردی بند کی جائے۔ جو کچھ بھی وہاں ہورہا ہے وہ بہت خوفناک اوردل دکھانے والا ہے اس کے ساتھ انہوں نے ’’فری فلسطین‘‘، ‘’محفوظ فلسطین‘‘ اور ’’فلسطین لائیوز میٹرز‘‘ کے ہیش ٹیگز بھی استعمال کیے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں