بلاول بھٹو زر داری حکومت اور اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ بریکٹ ہوئے جو پیشکش بلاول کو ہوئی وہ ہمیں بھی ہوئیں ہم نے قبول نہیں کی، پیپلز پارٹی ہماری بات مانتی تو حکومت ختم ہو چکی ہوتی، مولانا فضل الرحمان

پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے پی ڈی ایم ٹوٹنے کا ذمہ دار پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو زر داری کو قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ بلاول بھٹو زر داری حکومت اور اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ بریکٹ ہوئے جو پیشکش بلاول کو ہوئی وہ ہمیں بھی ہوئیں ہم نے قبول نہیں کی، استعفوں کا آپشن پی ڈی ایم کے اعلامیہ میں موجود تھا،

پیپلز پارٹی ہماری بات مانتی تو آج یہ حکومت ختم ہو چکی ہوتی ہے، ہم بہت کچھ جانتے ہیں، بہت کچھ ہمارے نوٹس میں آئے،ہم محاذ نہیں کھولنا چاہتے۔ایک انٹرویومیں پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے کہاکہ بلاول بھٹو زر داری حکومت اور اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ بریکٹ ہوئے جو پیشکش بلاول کو ہوئی وہ ہمیں بھی ہوئیں لیکن ہم نے قبول نہیں کی۔ انہوں نے کسی کا نام لئے بغیر کہاکہ جب آپ میں میر جعفر اٹھیں گے تو کچھ بھی فرق پڑے گا، نام لینے کی ضرورت نہیں لوگ بہت ہوشیار سمجھ جاتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ اگر ہم نے بلاول ہی کو پی ڈی ایم کہنا ہے تو پھر اسٹیبلشمنٹ کے ہاتھ میں کون کھیل رہا ہے؟، پی ٹی آئی کا بریکٹ کون ہوا ہے؟ ہم وہ سیاست نہیں کرینگے۔انہوں نے کہاکہ ہمارے اعلامیہ میں استعفوں کا آپشن موجود ہے، اس کا انکار کر دیا گیا۔ انہوں نے کہاکہ جب ہم دونوں اتحادی ہیں جب ملکر کام کرینگے تو اثر ہوگا اور جب ہم تقسیم ہو جائینگے تو اثر اورہو گا۔ انہوں نے کہاکہ اس وقت ہم ملکر استعفیٰ دیتے تو الیکشن بھی ہو چکے ہوتے اور حکومت بھی جا چکی ہوتی۔انہوں نے کہاکہ جب صورتحال تقسیم ہو گئی ہے تو اس میں اسمبلی کے اندر لوگوں کو باہر نکالنا ہے تو تبدیلی کے امکانات کم ہو جاتے ہیں۔ ایک سوال پر انہوں نے کہاکہ ہم بہت کچھ جانتے ہیں، بہت کچھ ہمارے نوٹس میں آئے لیکن ہم محاذ نہیں کھولنا چاہتے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں