بڑی ہو کر ڈاکٹر بنوں گی ۔۔ معصوم بچی جو سڑک پر بیٹھ کر تعلیم کے حصول کے ساتھ گھر والوں کا

حلال روزی کمانا بہت ہی مشکل کام ہے۔ آپ نے اور ہم نے ہمیشہ یہی سنا ہوگا لیکن اس بات کو غلط پشاور کی ایک غریب بچی نے کر دکھایا ہے۔ جسے پڑھنے کا بہت زیادہ شوق ہے لیکن غریبی کی وجہ سے یہ سڑک پر بیٹھ کر وزن کرنے کی مشین سے لوگوں کا وزن کرتی ہے تا کہ کچھ پیسے گھر لے جائے اور اس سے انکے گھر کا گزارا ہو سکے۔

اس 10 سالہ بچی کا نام مریم ہے جو ویسے تو ابھی پرائمری کلاس میں پڑھتی ہے لیکن اس کے ارادے بہت بلند ہیں اور وہ بڑے ہو کر ڈاکٹر بننا چاہتی ہے تا کہ اپنے لوگوں کا بہترین علاج کر سکے اور اپنے گھر والوں کو اچھی زندگی دے سکے۔ یہ بچی پشاور کے علاقے صدر بازار میں موجود ہوتی ہیں اور یہاں ہی ایک دوکان آگے بیٹھ کر لوگوں کا وزن بھی کرتی ہے اور ساتھ ہی ساتھ پڑھتی بھی ہے۔ مریم نامی اس بچی کا کہنا ہے کہ اسے دن بھر یہ کام کرنے سے 200 سے 300 روپے مل جاتے ہیں جس کا وہ گھرکھانا لے جاتی ہے کیونکہ اس کے گھر میں اور بھی کھانے والے ہیں جیسا کہ اس کی 3 بہنیں ، 1 بھائی اور امی ابو ہیں۔ مریم کے والد بھی ماسک بیچتے ہیں تب بھی انکے گھر کا گزارا کچھ زیادہ آرام سے نہیں ہوتا۔ ان پریشان کن حالات کے باوجود بھی مریم کے حوصلے پہاڑوں سے باتیں کرتے ہیں

اور وہ ہمیشہ مسکراتی رہتی ہے اور کہتی ہے کہ کوئی بھی مجھے یہاں کام کرنے سے تنگ نہیں کرتا بلکہ جو لوگ بھی اس طرف اتے ہیں وہ مجھ سے خوشی خوشی وزن کراتے ہیں ۔ اور جب کسی کا وزن کم ہوتا ہے وت وہ بہت خوش ہوتا ہے لیکن جب وزن برھ جاتا ہے تو لوگ کہتے ہیں کہ آپکی مشین خراب ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں