کراچی والوں کے لئے خوشخبری، سی پیک کے تحت بڑے اقتصادی منصوبے کا آغاز

کراچی والوں کے لئے خوشخبری، سی پیک کے تحت بڑے اقتصادی منصوبے کا آغاز۔ تفصیلات کے مطابق وزارت بحری امور نے کراچی کے لیے بڑا اقتصادی ٹرانسفارمیشن پراجیکٹ کا آغاز کیا ہے جسکا فیصلہ بیجنگ میں منعقد کمیٹی کے اجلاز کے دوران کیا گیا ۔ اس حوالے سے وفاقی وزیر برائے بحری امور علی زیدی نے کہا ہے کہ
اجلاس میں چین اور پاکستان کی جانب سے کراچی کوسٹل کمپریہنسیو ڈویلپمنٹ زون کو سی پیک میں شامل کرنے پر اتفاق ہوا ہے ۔ وفاقی وزیر کا مزید کہنا تھا کہ کراچی کوسٹل کمپریہنسیو ڈویلپمنٹ زون

منصوبہ بحری امور کی وزارت کا ایک بہترین اقدام ہے اور یہ ایک گیم چینجر ثابت ہوگا۔واضح رہے کہ گزشتہ روز وزیر اعظم عمران خان نے واضح کیا ہے کہ کراچی کے ساحلی زون کو سی پیک میں شامل کرنا گیم چینجر ہے،ماہی گیروں کیلئے سمندر کو محفوظ بنائیں گے ۔ اتوار کو ٹوئٹر پر اپنے بیان میں وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ کراچی کے ساحلی زون کو سی پیک میں شامل کرنا گیم چینجر ہے۔ انہوں نے کہا کہ ماہی گیروں کیلئے سمندر کو محفوظ بنائیں گے۔ وزیر اعظم نے کہاکہ ساحلی زون منصوبہ کے تحت کم آمدنی والے افراد کیلئے 20ہزار گھریلو یونٹ تیار کریں گے جس سے سرمایہ کاروں کیلئے سرمایہ کاری کے مواقع پیدا ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ کراچی کو دیگر ترقی یافتہ پورٹ سٹیز کے برابر لائیں گے۔دوسری جانب وفاقی وزیر مواصلات مراد سعید نے پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کی جانب سے بلوچستان میں شروع کئے گئے منصوبوں کی تفصیلات اور ویڈیوز جاری کر دیںاور کہا ہے کہ بلوچستان کی ترقی پاکستان کی ترقی ہے، بلوچستان خوشحال ہوگا تو پاکستان خوشحال ہوگا۔ اپنے بیان میں وفاقی وزیر نے کہاکہ وزیراعظم عمران خان نے پسماندہ اور محروم علاقوں کی ترقی اور خوشحالی کا نہ صرف وعدہ کیا بلکہ عملی طور پر اس کے لئے اقدامات اٹھائے، ماضی کے حکمرانوں کے مقابلے میں وزیراعظم عمران خان نے بلوچستان کی ترقی اور اس کے عوام کے مسائل پر خصوصی توجہ دیتے ہوئے وقتاً فوقتاً اپنے دوروں سے بلوچستان اور اہل بلوچستان کے معاملات میں اپنی ذاتی اور خصوصی دلچسپی کا اظہار کیا۔

وفاقی وزیر نے کہاکہ ماضی میں سڑکیں بنانے کا دعویٰ کرنے والی حکومتوں نے بلوچستان میں نشستیں کم ہونے کی وجہ سے اسے نظر انداز کیا۔ انہوںنے کہاکہ ہماری ہمیشہ سے کوشش رہی ہے کہ بلوچستان کو ایسی راہ پر گامزن کیا جائے جس کی منزل ایک خوشحال، پرامن اور ترقی یافتہ صوبہ ہو
جہاں عوام کو صحت، تعلیم، پینے کے صاف پانی، روزگار اور کاروبار کی تمام سہولتیں یکساں میسر ہوں۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ یہ صرف ہمارا دعویٰ ہی نہیں اور نہ ہی کوئی خواب ہے بلکہ گذشتہ تین سالوں کے دوران ہم نے عملی طور پر ان اقدمات کو عملی شکل دینے کیلئے صحیح سمت میں پیشرفت کا آغاز کیا جس کے مثبت نتائج ہر شعبہ زندگی پر مرتب ہو رہے ہیں اور صوبے کے عوام ان تبدیلیوں کا خود بھی مشاہدہ کررہے ہیں۔

وفاقی وزیر نے کہاکہ ماضی کی حکومتوں نے بلوچستان میں صرف تختیاں لگائیں
اور منصوبوں کے ٹینڈرز جاری کئے لیکن عملی طور پر کوئی کام نہیں ہوا اور نہ ہی زمین پر کوئی کام نظر آیا۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ پی ٹی آئی کی حکومت نے مغربی روٹ سی پیک کی نہ صرف منظوری دی بلکہ ڑوب۔ کچلاک منصوبے سے اس کا آغاز کیا، وفاقی وزیر نے کہاکہ ہوشاب آواران 146 کلومیٹر شاہراہ کی تعمیر کا کام زور و شور سے جاری ہے جو اپنے مقررہ وقت سے 20 فیصد تیزی سے انجام دیا جا رہا ہے، وزیراعظم عمران خان نے رواں سال کوئٹہ ویسٹرن بائی پاس
اور ڈیرہ مراد جمالی بائی پاس کا سنگ بنیاد رکھا، کوئٹہ ویسٹرن بائی پاس منصوبے کی ویڈیو جاری کر دی گئی ہے، ڈیرہ مراد جمالی بائی پاس پر کام جاری ہے۔

وفاقی وزیر نے کہاکہ زیارت،موڑ کچ ہرنائی 165 کلومیٹر شاہراہ اور 198 کلو میٹر بسیمہ۔ خضدار شاہراہ پر کام تیزی سے جاری ہے، بسیمہ۔ خضدار شاہراہ بھی اس سال دسمبر میں مکمل ہو جائے گی، ان منصوبوں کا سنگ بنیاد گزشتہ برس وزیراعظم عمران خان نے رکھا تھا۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ جل جو بیلہ منصوبے کا سنگ بنیاد
وزیراعظم عمران خان آئندہ ہفتے رکھیں گے۔ انہوںنے بتایاکہ کراچی، چمن، کوئٹہ،خضدار منصوبے کے ایک سیکشن کی پروکیورمینٹ کا مرحلہ مکمل ہو چکا ہے ، 330 کلومیٹر کے دوسرے سیکشن کیلئے اشتہار جاری کر دیا گیا ہے، یہ دونوں سیکشن بی او ٹی کے تحت مکمل ہوں گے، اس سڑک کی کل لمبائی 796 کلو میٹر ہے۔

مراد سعید نے کہاکہ سڑکوں کے ان منصوبوں سے بلوچستان میں فاصلے کم ہوں گے، سیاحت کو فروغ ملے گا اور فصلیں بروقت مارکیٹ تک پہنچ سکیں گی،
مراد سعید نے کہاکہ بلوچستان کی ترقی و خوشحالی کے ان منصوبوں سے ملک کے دیگر حصوں سے رابطے بحال ہوں گے۔مراد سعید نے کہاکہ ان منصوبوں سے ہزاروں لوگوں کو بالواسطہ یا بلاواسطہ روزگار کے مواقع میسر آئے، شاہراہوں کی تعمیر و توسیع سے نہ صرف بلوچستان کے دور دراز علاقوں میں معاشی ترقی کے نئے دور کا آغاز ہوگا بلکہ سی پیک کے ذریعے پورے خطے میں معاشی ترقی کی راہ ہموار ہوگی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں