63

How is the shroud of Kaaba printed? Read important information

Where does the Kaaba's Kiswa end up after its replacement on Arafat Day? |  Al Arabiya English

کعبہ شریف کی تاریخ کی طرح بیت اللہ کے غلاف کی تاریخ بھی طویل ہے۔ غلاف کعبہ کی تیاری کا بابرکت عمل بھی صدیوں کے دوران کئی مراحل کے تحت آگے بڑھتا رہا ہے۔ کسی دور میں غلاف پر پرنٹنگ کے لیے چاک کا استعمال کیا جاتا تھا مگرآج غلاف پر پرنٹنگ کے لیے جدید آلات کا استعمال کیا جاتا ہے۔شاہ عبدالعزیز کمپلیکس
برائے کعبہ کے زیراہتمام ہرسال غلاف کعبہ تیار کیا جاتا ہے۔ غلاف کعبہ کی تیاری کپڑے کے تجزیے، رنگ سازی، لیبارٹری، خود کار طریقے سے بنائی، سونے کی کڑھائی، غلاف کو اسمبل اور آخر

میں پہلے غلاف کی جگہ دوسرے غلاف سے کعبہ شریف کو ڈھانپنے جیسے کئی مراحل میں مکمل ہوتی ہے۔عرب ٹی وی کے مطابق شاہ عبدالعزیزکمپلیکس میں غلاف کعبہ پر طباعت(پرنٹنگ)کا شعبہ الگ سے کام کرتا ہے جس میں انتہائی مہارت کے ساتھ غلاف کعبہ کے کپڑے پر پرنٹنگ کی جاتی ہے۔ پرنٹنگ کے بعد تیار ہونے والے غلاف کعبہ کو جدید آرٹ کا ایک شاہکار تصور کیا جاتا ہے۔ اس پر کاری گری کی مہارت، کام شائسگتی، مستند عربی خطاطی کی خوبصورتی نمایاں انداز میں جھلکتی ہے۔شاہ عبدالعزیزکمپلیکس میں غلاف کعبہ کی پرنٹنگ کے شعبے کے انچارج عادل اللقمانی کا کہنا تھا کہ شاہ عبدالعزیز آل سعود کے ہاتھوں کمپلیکس کے قیام سے لے کر اب تک کمپلیکس میں پرنٹنگ کے شعبے نے کئی اعلی کارکردگی کے
مدارج طے کیے ہیں۔

شاہ عبدالعزیز نے 1346 ہجری کے وسط میں غلاف کعبہ کی تیاری کے لیے ایک خصوصی مرکزقائم کر کے اس کمپلیکس کی دیکھ بھال کی سرکاری پالیسی اپنائی۔ اس کے بعد آج تک خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان عبدالعزیز اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز تک غلاف کعبہ کو انتہائی احتیاط اور اہتمام کے ساتھ تیار کیا جاتا
ہے۔اللقمانی نے بتایا کہ غلاف کعبہ پرپہلے طباعت کا طریقہ یہ تھا کہ آیات کو چاک سے کاغذ پر لکھا جاتا تھا۔ اس کے بعد حروف کے کناروں پر سوئی سے سوراخ کیے جاتے۔ پھر تحریری کاغذ کو سیاہ کپڑے پر رکھ کر شفاف کپڑا حاصل کیا جاتا تھا جس پر سفید پاڈر چھڑکا جاتا۔ جھپکی کاغذ پر ماری جاتی۔ سفید پائوڈر سوراخوں سے کپڑے پر گرتا۔

آج کل
غلاف کعبہ پر آیات کو جدید سائنسی طریقے کے مطابق مشینوں سے لکھا جاتا ہے۔ جدید طریقے کے مطابق سیاہ کپڑے پر ”شبلون” کے ذریعے پرنٹنگ کی جاتی ہے۔جسے سلکس اسکرین کہا جاتا ہے آیات کو چھاپا جاتا ہے۔اس چھپائی میں سفید یا پیلی سیاہی استعمال کی جاتی ہے۔اللقمانی نے وضاحت کی کہ پرنٹنگ ڈیپارٹمنٹ کا موجودہ طریقہ کار مزید تفصیلی ہے۔
بنے ہوئے کپڑے کو پہلے تیار کیا جاتا ہے۔ یہ ٹھوس لکڑی کے دو مخالف سمتوں پر مشتمل ہوتا ہے جس پر ایک کچا ”استر”کپڑا جسے دوت کے نام سے جانا جاتا ہے کو مضبوط کیا جاتا ہے۔ پھر اس پر ایک سادہ سیاہ ریشمی کپڑا لگایا جاتا ہے جس پرپرنٹنگ نہیں ہوتی۔ یہ وہ ہے جس پر کسوا پٹی، باب کعبہ پردہ لگایا جاتا ہے۔ اس کے بعد اس پرشبلونات یا سلک اسکرین
کے ذریعے پرنٹنگ کی جاتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ شبلونات چار اطراف کا ایک لکڑی کا فریم ہے جس پر مصنوعی ریشم کے کپڑے کو چھوٹے کھلے سوراخوں سے کھینچ کرسخت کیا جاتا ہے۔ اس سے مائعات کے گزرنے کا موقع ملتا ہے۔شبلونات کو پرنٹنگ ٹیمپلیٹ بننے کے لیے تمام سوراخوں سوائے پرنٹ کرنے کے لیے درکار لائنوں یا ڈرائنگ کے
چھیدوں کے لیے بند کیا جاتا ہے۔اس کے بعد سلک کو کیمیائی مادے سے کوٹنگ کرکے روشنی میں جمنے کی خصوصیت کی ایک حساس فلم اور پھر اسے اندھیرے میں اس کے لیے مختص کردہ حرارت میں خشک کیا جاتا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ غلاف کعبہ کی سب سے اہم خصوصیت چاندی اور سونے کی تاروں سے کڑھائی ہے اور یہ عمل مختلف کثافت
کے سوتی دھاگوں کو لکیروں اور سجاوٹ کے اوپر رکھ کر کیا جاتا ہے۔ اسے فلنگ کے نام سے جانا جاتا ہے۔

تکنیکی مشاہدے کے ساتھ۔ کس طرح کڑھائی کی اصلیت بننے پر پھیلے ہوئے کپڑوں پر پرنٹ کی جاتی ہے جوسطح پر ایک ”فریم”بناتا ہے۔ اس کے اوپر پیلے رنگ کے روئی کے تنگ دھاگوں سے کڑھائی کی جاتی ہے۔ اس کے بعداسے سنہری
تاروں سے سفید روئی پرکڑھائی کی جاتی۔ جب اس پر چاندی کے تاروں سے مخالف سمتوں میں کڑھائی کی جائے گی اور بالکل واضح طور پر ڈیزائن اور حروف کا نمایاں بنیادی ڈھانچہ تشکیل دیا جائے گا تو اس کڑھائی کو چاندی کے تاروں سے ڈھانپ دیا جائے گا تاکہ آخر میں ایک نمایاں شکل بن سکے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں